اب جاپان میں خاتون روبوٹ خبریں پڑھیں گی

ویب ڈیسک_ٹوکیو: گزشتہ دنوں آپ نے جاپان کی خوبصورت ترین خاتون روبوٹ ’ایریکا‘ کے بارے میں خبریں پڑھی ہوں گی اور اب اس سال ایریکا بطور نیوز اینکر پہلی مرتبہ خبریں پڑھ کر سنائیں گی۔

انسان نما اس روبوٹ میں دنیا کا سب سے جدید مصنوعی نظام نصب ہے جو اسے بات چیت کے قابل بناتا ہے۔ اسے بنانے والے انجینئر ہیروشی آئشی گورو نے برسوں کی محنت کے بعد اسے تیار کیا ہے اور وہ کہتے ہیں کہ اس میں گویا اعلیٰ درجے کا آزادانہ شعور ہے جسے ہیروشی ایک طرح کی روح قرار دیتے ہیں۔

چند ماہ بعد اپریل میں ایریکا ایک نیا کردار نبھائیں گی جو اس سے قبل پہلے کبھی نہیں کیا گیا۔ ایریکا جاپانی ٹی وی پر پہلی مرتبہ خبریں پڑھ کر سنائیں گی۔
ڈاکٹر ہیروشی کے مطابق وہ مصنوعی ذہانت اور انسانی مدد سے خبریں پڑھے گی۔ ڈاکٹر ہیروشی اوساکا یونیورسٹی میں انٹیلی جنٹ روبوٹکس لیبارٹری کے سربراہ ہیں اور وہ 2014ء سے اپنی روبوٹ کو ٹی وی پر نیوز کاسٹر بنانے کی کوشش کررہے ہیں۔ اس روبوٹ کی تیاری میں گزشتہ کئی برس میں خطیر رقم خرچ کی گئی ہے۔

انسان نما یہ روبوٹ اپنے بازو تو نہیں ہلاتی لیکن بات کرتےوقت اپنی گفتگو میں تاثرات شامل کرتی ہے۔ یہ متوجہ ہوتی ہے اور سوالات کے جوابات بھی دیتی ہے۔

ایریکا ٹیکنالوجی کا ایک شاہکار ہے جس کے چہرے پر 14 انفراریڈ سینسر لگے ہیں اور یہ ایک بھرے ہوئے کمرے میں موجود افراد کے چہرے کے تاثرات کو سمجھ سکتی ہے۔ اس روبوٹ کا سافٹ ویئر بنانے والے ڈاکٹر ڈیلن گلاس نے کہا ہے کہ یہ لطائف اور چٹکلے سناتی ہے اور اپنے بل پر سوچتی اور درست برتاؤ کرتی ہے۔ اس لحاظ سے ایریکا مکمل طور پر خود مختار روبوٹ ہے۔

اسی ٹیم نے 2014ء میں پہلی مرتبہ اصل انسان دکھائی دینے والے دو روبوٹ نیوز اینکر بنائے تھے جنہیں کوڈو موروئیڈ اور اوٹانو روئیڈ کا نام دیا گیا تھا تاہم وہ ٹوکیو میوزیم تک ہی محدود رہے تھے۔ ماہرین یہ بھی جاننا چاہتے ہیں کہ لوگ حقیقی ماحول میں روبوٹ سے کس طرح کا رویہ رکھتے ہیں اور ان سے کیسے پیش آتے ہیں۔

ایریکا خبریں پڑھتے ہوئے ہونٹ ہلاتی ہے، بھنوؤں کو حرکت دیتی ہے اور سر کو دائیں یا بائیں جنبش دیتی ہے۔ اس میں دبیز ہوا سے کام کرنے والی سرو موٹرز ہیں جو اس کے چہرے پر تاثرات ابھارتی ہیں۔

Share on FacebookTweet about this on TwitterShare on Google+