رمضان المبارک کے مقدس مہینے میں مصنوعی طریقے سے تیار فروٹ بیماریاں پیدا کرنے کا موجب،محکمہ فوڈ اتھارٹی غائب

جہلم(ڈاکٹر عمران جاوید خان)رمضان المبارک کے مقدس مہینے میں مصنوعی طریقے سے تیار فروٹ بیماریاں پیدا کرنے کا موجب،محکمہ فوڈ اتھارٹی غائب۔ تفصیلات کے مطابق رمضان المبارک کا مقدس مہینہ شروع ہوتے ہی جہاں خردو نوش کی قیمتیں آسمان سے باتیں کرنے لگ گئی ہیں اور ہر چیز کی طرح فروٹ بھی سو گنا مہنگا فروخت ہو رہا ہے اور غریب کی دسترس سے بھی باہر ہو گیا ہے اوپر سے ستم ظریفی کہ کاشتکار وبیوپاری سب ہی عوام کو دونوں ہاتھوں سے لوٹنے اور تجوریاں بھرنے کے چکر میں کچے فروٹ کو مصنوعی طریقے سے کیمیکل مصالحہ لگا کر تیار کر کے مارکیٹ میں فروخت کر رہے ہیں جو عوام کو نہ صرف ہوش ربا قیمتوں سے فروخت کر رہے ہیں بلکہ مضر صحت بھی ہیں اور پیٹ کی بیماریوں کا باعث بھی۔اسی طرح تربوز جو کے رمضان سے پہلے ستر روپے کا ملتا تھا اب نومولود تربوز کو سکرین اور سرخ رنگ کے انجیکشن لگا کر دو سو سے دوسو پچاس روپے میں فروخت ہو رہا ہیاور اس تربوز کو کھانے سے گردوں کو سخت نقصان پہنچتا ہے اور سرکاری ملازموں کی رمضان بازاروں میں فوج ظفر موج ہونے کے باوجود نہ تو مہنگائی کا طوفان تھمنے کا نام لے رہا ہے نا ہی محکمہ فوڈ اتھارٹی کی جانب سے کوئی روک تھام دیکھنے میں نظر آ رہی ہے پوری دنیا میں غیر مسلم بھی رمضان اور روزے دار وں کے احترام میں کھانے پینے کی اشیا ء میں قیمتوں میں نمایاں کمی کر دیتے ہیں اور اس کے برعکس ہم مسلمان اپنے ہی بھائیوں کا گلہ بے دردی سے کاٹنا فرضِ عین سمھجتے ہیں مگر یہ بھول گئے ہیں کہ خدا کی لاٹھی بے آواز ہے جو بیج بوئیں گے وہی کاٹنا بھی پڑے گا۔

Share on FacebookTweet about this on TwitterShare on Google+