ایس ایل ایس کالج، یوکےمیرج انگلش ٹیسٹ کا پاکستان میں بین الاقوامی مستند ادارہ ہے ا یم ڈی ایس ایل ایس سرفراز ملک پاکستان کا نام روشن کر رہے ہیں افغانستان (پاکیتہ) سے آن لائن سٹوڈنٹ حکمت اللہ

جہلم (عمران جاوید خان)ایس ایل ایس کالج، یوکےمیرج انگلش ٹیسٹ کا پاکستان میں بین الاقوامی مستند ادارہ ہے۔ مجھے میرے افغان دوستوں نے اور یوکےسے ایس ایل ایس کا بتایا کہ بہت اچھا ادارہ ہے میں نے انٹرنیٹ پر بھی سرچ کیا۔ ان خیالات کا اظہارافغانستان (پاکیتہ) سے تعلق رکھنے والےایس ایل ایس کالج کے آن لائن سٹوڈنٹ حکمت اللہ نے ٹیسٹ میں کامیاب ہونے پر کیا، انہوں نے بتایا کہ ا یم ڈی ایس ایل ایس سرفراز ملک پاکستان کا نام روشن کر رہے ہیں اوروہ ذاتی دلچسپی لے کر تمام سٹوڈنٹس کوکامیابی تک معاونت دیتے ہیں۔ایس ایل ایس کے ریگولر اور آن لائن کلاسز لینے والے سارے امیدوار کامیاب ہو گئے۔ یو کےمیرج اے ون انگلش ٹیسٹ اسلام آباد، لاہور اور کراچی میں ہوا۔ اس ٹیسٹ میں بھی پاکستان کے مختلف شہروں اور افغانستان سے امیدواروں نے شرکت کی۔تفصیل کے مطابق افغانستان (پاکیتہ) سے تعلق رکھنے والے حکمت اللہ، جہلم سے تعلق رکھنے والی عمارہ نومان،جہلم کی مومنہ نواز، زویا علی(مشین محلہ،جہلم)، فروا بانو(کراچی)، محمد مبشر(النگ،جہلم)، امام الدین(لوئر دیر)، شگفتہ پروین(فیصل آباد) اور دیگر نے یو کے آئلز لائف سکلز یو کےمیرج انگلش ٹیسٹ میں مطلوبہ سی ای ایف آرلیول اے ون حاصل کر کے کامیابی حاصل کی۔
یوکےشادی کر کے جانے والوں کیلئے یہ ٹیسٹ برطانیہ گورنمنٹ نے ویزہ اپلائی کرنے کیلئے لازمی قرار دیا ہے۔ منیجنگ ڈائریکٹرایس ایل ایس کالج سرفراز ملک نے طلبہ وطالبات کی شاندار کارکردگی پر انہیں اورایس ایل ایس کالج کے محنتی سٹاف کو مبارکباد دی جن کی وجہ سے ادارہ مسلسل کامیابیوں کی راہوں پہ گامزن ہے۔ یاد رہے کہ ایس ایل ایس برٹش کونسل کا بی ٹو بی پارٹنر اور اے ای او کا بھی مستند ادارہ ہے۔93 مرتبہ اس ٹیسٹ میں ایس ایل ایس کا رزلٹ سو فیصدرہ چکا ہے اور ایس ایل ایس کی ایک سٹوڈنٹ نے سٹوڈنٹ ویزہ کیلئے آئلز ٹیسٹ میں 8.5بینڈز حاصل کیئے جو پاکستان بھر میں سب سے زیادہ بینڈز تھے۔ایس ایل ایس یوکے میرج انگلش ٹیسٹ کا سب سے بڑا، پرانااور سب سے اچھا رزلٹ دینے والا ادارہ ہے اسی لیئے نہ صرف پاکستان بھر سے بلکہ ہمسایہ ممالک سے بھی لوگ ایس ایل ایس کالج سے آن لائن ٹریننگ حاصل کر کے کامیابی حاصل کرتے ہیں۔

Share on FacebookTweet about this on TwitterShare on Google+